TOP

یاد


رات اوڑھے ہوئے آئی ہے فقیروں کا لباس

چاند کشکولِ گدائی کی طرح نادم ہے


دل میں دہکے ہوئے ناسور لئے بیٹھا ہوں

یہی معصوم تصور جو ترا مجرم ہے



کون یہ وقت کے گھونگٹ سے بلاتا ہے مجھے

کس کے مخمور اشارے ہیں گھٹاؤں کے قریب

کون آیا ہے چڑھانے کو تمنّاؤں کے پھول

ان سلگتے ہوئے لمحوں کی چتاؤں کے قریب



وہ تو طوفان تھی، سیلاب نے پالا تھا اسے

اس کی مدہوش امنگوں کا فسوں کیا کہیے

تھرتھراتے ہوئے سیماب کی تفسیر بھی کیا

رقص کرتے ہوئے شعلے کا جنوں کیا کہیے



رقص اب ختم ہوا موت کی وادی میں مگر

کسی پائل کی صدا روح میں پایندہ ہے

چھپ گیا اپنے نہاں خانے میں سورج لیکن

دل میں سورج کی اک آوارہ کرن زندہ ہے



کون جانے کہ یہ آوارہ کرن بھی چھپ جائے

کون جانے کہ اِدھر دھند کا بادل نہ چھٹے

کس کو معلوم کہ پائل کی صدا بھی کھو جائے

کس کو معلوم کہ یہ رات بھی کاٹے نہ کٹے



زندگی نیند میں ڈوبے ہوئے مندر کی طرح

عہدِ رفتہ کے ہر اک بت کو لئے سوتی ہے

گھنٹیاں اب بھی مگر بجتی ہیں سینے کے قریب

اب بھی پچھلے کو، کئی بار سحر ہوتی ہے




0 comments:

Post a Comment