TOP

آج روٹھے ہوئے ساجن کو بہت یاد کیا


آج روٹھے ہوئے ساجن کو بہت یاد کیا

اپنے اجڑے ہوئے گلشن کو بہت یاد کیا

جب کبھی گردشِ تقریرنے گھیرا ہے ہمیں



گیسوئے یا ر کی الجھن کو بہت یاد کیا

شمع کی جوت پہ جلتے ہوئے پروانوں کو

اک ترے شعلہ دامن نے بہت یاد کیا

جس کے ماتھے پہ نئی صبح کا جھومر ہو گا

ہم نے اۃس وقت کی دلہن کو بہت یاد کیا

آج ٹوٹے ہوئے سپنوں کی بہت یاد آئی

آج بیتے ہوئے ساون کو بہت یاد کیا

ہم سرِ طُور بھی مایوس تجّلی ہی رہے
اس دربار کی چلمن کو بہت یاد کیا
مطمئن ہو ہی گئے دا م و قفس میں ساغرؔ
ہم اسیروں نے نشیمن کو بہت یاد کیا



0 comments:

Post a Comment