TOP

ورنہ اس شہر ِتمنا سے تو دنیا گزری



آج کیا دیکھ کے بھر آئی ہیں تیری آنکھیں 

ہم پہ اے دوست یہ ساعت تو ہمیشہ گزری 

میری تنہا سفری میرا مقدر تھی فراز 

...ورنہ اس شہر ِتمنا سے تو دنیا گزری

0 comments:

Post a Comment