TOP

وصال میں بھی وہی ہے فراق کا عالم


وصال میں بھی وہی ہے فراق کا عالم
کہ اس کو نیند ، مجھے رتجگے کی عادت ہے
یہ خود اذیتی کب تک فراز تُو بھی اُسے
نہ یاد کر کہ جسے بھولنے کی عادت ہے

0 comments:

Post a Comment