TOP

وہ رنگوں میں ڈھلی لڑکی


وہ رنگوں میں ڈھلی لڑکی

کبھی جب بات کرتی ہے

تو اس کے لفظ خوشبو کی طرح محسوس ہوتے ہیں

وہ ہنستی ہے تو جیسے سارا عالم اس ہنسی میں ڈوب جاتا ہے

وہ لب اس کے، وہ آنکھیں اور وہ چہرے کی شادابی

کہ جیسے اپسرا کوئی

وہ میرا نام لیتی ہے تو میری روح میں جیسے نشہ سا اک اُترتا ہے

مرا مَن جھوم اٹھتا ہے

وہ رنگوں میں‌ڈھلی لڑکی

جھکائے اپنی پلکوں کو کبھی مجھ سے جو کہتی ہے

مجھے تم سے محبت ہے

تو اس کا شرمگیں لہجہ، یقیں مجھ کو دلاتا ہے کہ دُنیا خوبصورت ہے

وہ رنگوں میں ڈھلی لڑکی

اُداسی کے گھنے سایوں کو جب بھی اُوڑھ لیتی ہے

مرا دل خون روتا ہے

میں اس کی شربتی آنکھوں کے نم سے بھیگ جاتا ہوں

وہ رنگوں میں ڈھلی لڑکی

جسے مجھ سے محبت ہے

مرا اظہار سنتی ہے تو پھر سب بھول جاتی ہے

جھکائے اپنی پلکوں کو وہ ایسے مسکراتی ہے

کہ جیسے اپسرا کوئی

وہ رنگوں میں ڈھلی لڑکی

مرے لفظوں میں رہتی ہے

مجھے اکثر یہ کہتی ہے

مجھے تم سے محبت ہے



0 comments:

Post a Comment